کاشتکاروں کو گنے کے واجبات ادانہ کرنے والے شوگر مل مالکان کو جیلوں میں ڈالیں گے'شہبازشریف

شوگر مل مالکان 15روزکے اندر کاشتکاروں کو ادائےگےاں کرےں ورنہ انہےں ڈنڈے پڑیں گے اور وہ عید بھی جیلوں میں گزاریں گے
کسی کو کاشتکارکا حق مارنے نہیں دوں گا،چھوٹے کاشتکاروں کو بلاسود قرضے دینے کا پروگرام بنالیا ہے

کسی کا دماغ خراب نہیں کہ وہ بھارت کے ساتھ تجارت کرے لیکن شرط یہ ہے کہ کاشتکاروں کو اپنی محنت سے کمال دکھانا ہوگا

کاشتکار پےداوار بڑھائیں تو ہمیں بھارت سے کوئی چیز منگوانے کی ضرورت نہ پڑے ،میں بھارت کے ساتھ تجارت کا مخالف ہوں’ بجلی کے بلوں کے بقایا جات کا مسئلہ وفاقی حکومت کے ساتھ ملکر آپ کی مشاورت سے حل کراؤں گا’وزیراعلیٰ کا تقریب سے خطاب

لاہور(پی ایف پی)وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف نے کہا ہے کہ وزیر اعظم پاکستان محمد نواز شریف نے ملک کی تاریخ میں پہلی بار کسانوں کی فلاح و بہبوداور زرعی پیداوار میں اضافے کے لئے عظیم الشان پیکیج دیا ہے ۔ پنجاب حکومت نے بھی کسان کی خوشحالی اور زراعت کی ترقی کے لئے 100 ارب روپے کا تاریخ ساز پیکیج دیا ہے ۔ ان عظیم الشان پیکیج سے یقیناًپاکستان کی زراعت کے دن بدلیں گے ، ملک ترقی کرے گا اور خوشحال ہو گا ۔ اب کسانوں اور کاشتکاروں کی ذمہ داری ہے کہ وہ محنت کریں ، زرعی پیداوار میں اضافے کے لئے دن رات ایک کر دیں اور ملک کے لئے غلہ پیدا کریں ۔ کسانوں کی فلاح و بہبود کے لئے اربوں روپے کے پیکیج کسانوں پر کوئی احسان نہیں ہے بلکہ یہ ہماری ذمہ داری ہے اور ہم آئندہ بھی کسانوں کی ترقی و خوشحالی کے لئے اقدامات کرتے رہیں گے ۔وزیر اعلیٰ محمد شہباز شریف نے ان خیالات کا اظہار آج مقامی ہوٹل میں پاکستان کسان اتحاد کی جانب سے ان کے اعزاز میں کسانوں کے لئے بے مثال اقدامات کرنے کے حوالے سے منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔وزیر اعلیٰ نے کہا کہ میں دل کی اتھاہ گہرائیوں سے مبارکباد دیتا ہوں کہ ہم آج مال روڈ پر احتجاج کی بجائے پرسکون ماحول میں ملاقات کر رہے ہیں اور ایک اچھے ماحول میں کسانوں کے مسائل پر گفتگو ہو رہی ہے ۔اگر آپ احتجاج نہ کرتے تو شائد کسان پیکیج اس سے کہیں بہتر ہوتا ۔
آپ نے احتجاج کر کے اس میں کچھ کمی کروائی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کروڑوں پاکستانیوں اور کسانوں کی دعاؤں سے وزیر اعظم کو اللہ تعالی نے صحت عطا کی ہے ۔ ان کے آپریشن سے ایک روز قبل برطانیہ میں پاکستانی ہائی کمیشن میں انہوں نے ویڈیو لنک کے ذریعے بجٹ اور اکنامک کونسل کے حوالے سے اجلاسوں سے خطاب کیا ۔ بجٹ اجلاس کے دوران میں بھی ہائی کمیشن موجود تھا ۔ وزیر اعظم نے میری اور دیگر افراد کی موجودگی میں وفاقی وزیر خزانہ اور کابینہ کے اراکین کو ہدایت کی کہ کسانوں کو آسودہ کرنے کے لئے خصوصی اقدامات کئے جائیں کیونکہ پاکستان کا کسان مشکلات کا سامنا کر رہا ہے اور اسے بہت نقصان اٹھانا پڑا ہے۔ زرعی لوازمات ، کھاد اور بجلی کی قیمتوں میں جس قدر کمی لائی جا سکتی ہے لیکر آئیں ۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب حکومت نے وفاقی حکومت کے اعلان کردہ پیکیج میں پچاس فیصد حصہ ڈالا ہے اور آئندہ بھی اپنا بھرپور تعاون اور حصہ ڈالیں گے ۔انہوں نے کہا کہ وفاقی حکومت نے چاول اورکپاس کے ساڑھے بارہ ایکڑ کے کاشتکاروں کو پانچ ہزارروپے فی ایکڑ زر تلافی امداد دی تھی اور اس میں پنجاب حکومت نے اپنا پچاس فیصد حصہ ڈالا تھا لیکن بدقسمتی سے کسی اور نے اس میں کوئی حصہ نہیں ڈالا۔ اس مرتبہ امید ہے کہ باقی صوبے بھی اپنا حصہ ڈالیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب حکومت نے ساڑھے بارہ ایکڑ تک کے کاشتکاروں کیلئے بلاسود قرضوں کی فراہمی کا بھی پروگرام بنایا ہے اور ان قرضوں پر100فیصد مارک پنجاب حکومت خود برداشت کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ کپاس کی تحقیق کیلئے 5ارب روپے رکھے گئے ہیں جبکہ زرعی آلات کیلئے بھی اربوں روپے مختص کیے گئے ہیں۔
پنجاب حکومت 2016-17ء میں کسان پیکیج کے تحت 50ارب روپے جبکہ اگلے مالی سال مزید50ارب روپے خرچ کرے گی۔انہوں نے کہا کہ پنجاب میں کسانوں کے مسائل کے حل کیلئے زرعی کمیشن بنایا جارہا ہے جس میں کسانوں کے نمائندوں کو شامل کیاجائے گااوران کی مشاورت سے زراعت کی ترقی اور کسانوں کی فلاح کیلئے اقدامات کیے جائیں گے،اس زرعی کمیشن کا سربراہ میں خود ہوں گا۔انہوں نے کہا کہ کسانوں کو درپیش مشکلات سے آگاہ ہیں گزشتہ 2 سالوں کے دوران کپاس اور چاول کی فصل کو نقصان پہنچا ہے ۔پنجاب میں گنے کے کاشتکاروں کو معاوضے کی ادائیگی یقینی بنائی گئی ہے۔پنجاب میں 180روپے فی من کے حساب سے گنے کے کاشتکاروں کو ادائیگی کی گئی ہے جبکہ سندھ میں گنے کی قیمت 150روپے تک لائی گئی ۔سابق صدر پاکستان نے سندھ کے گنے کے کاشتکاروں کو نقصان پہنچایا۔ہم پر بھی دباؤ تھا لیکن ہم نے کاشتکاروں کو ادائیگی یقینی بنائی۔انہوں نے کہا کہ یہ بھی امر افسوسناک ہے کہ زرعی یونیورسٹیوں اور تحقیقی اداروں نے زرعی تحقیق کے حوالے سے اپنی ذمہ داریاں نہیں نبھائیں،ان اداروں کو اب نتائج دینا ہوں گے۔زیادہ پیداوار دینے والی فصلوں کے بیج تیار کرنے ہوں گے تاکہ پاکستان خوشحال ہو اور اپنی زرعی پیداوار برآمد کرنے کے قابل ہو۔انہوں نے کہا کہ پاکستان زرعی ملک ہے لیکن ہمیں گزشتہ سال کپاس درآمد کرنا پڑی ۔کپاس کی فصل کے تباہ ہونے سے قومی ترقی میں ایک فیصد کمی ہوئی ہے ۔وزیراعظم پاکستان نے کسانوں کی ترقی اورزراعت کے فروغ کے لئے بے مثال پیکیج دیا ہے اور ہم اس پیکیج میں اپنا بھر پور حصہ ڈالیں گے۔کاشتکاروں کو ان کا حق دیں گے ۔
بلاسو قرضوں ،کھاد،زرعی آلات اوردیگر مدات میں کسانوں کو ریلیف دیا جائے گا۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ بجلی کے بلوں کے بقایا جات کا مسئلہ وفاقی حکومت کے ساتھ ملکر آپ کی مشاورت سے حل کراؤں گا لیکن آپ کو وعدہ کرنا ہوگا کہ اس بارجو فیصلہ ہوگااس پر من وعن عملدرآمد کیا جائے گا اور کوئی تاخیری حربے استعمال نہیں کیے جائیں گے۔میں بہت جلد آپ کے نمائندہ وفد کے ساتھ وفاقی حکومت سے بات چیت کروں گا۔انہوں نے کہا کہ کسی کا دماغ خراب نہیں کہ وہ بھارت کے ساتھ تجارت کرے لیکن شرط یہ ہے کہ کاشتکاروں کو اپنی محنت سے کمال دکھانا ہوگا اور پیداوار بڑھانا ہوگی۔میں سمجھتا ہوں کہ کاشتکار پیداوار بڑھائیں تو ہمیں بھارت سے کوئی چیز منگوانے کی ضرورت نہ پڑے ۔میں بھارت کے ساتھ تجارت کا مخالف ہوں۔انہوں نے کہا کہ زرعی انکم ٹیکس کے حوالے سے اس وقت بات کرنا مناسب نہیں لیکن میں انشاء اللہ آپ کے ساتھ بیٹھوں گا اورکوئی حل نکالیں گے۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ ایسی شوگر ملیں جنہوں نے واضح احکامات کے باوجود کاشتکاروں کو گنے کے واجبات ادانہیں کیے،میں انہیں خبردار کرتا ہوں کہ وہ 15روزکے اندر کاشتکاروں کو ادائیگیاں کریں ورنہ انہیں جیل بھجوادیں گے۔میں کسی کو کاشتکار کا حق مارنے نہیں دوں گاجو شوگر مل مالک کاشتکار وں کو ادائیگی نہیں کرے گا انہیں ڈنڈے پڑیں گے اور وہ عید بھی جیلوں میں گزاریں گے۔صوبائی وزیر رانا ثناء اللہ نے خطا ب کرتے ہوئے کہا کہ بعض عناصر نے کاشتکاروں کو حکومت کے خلاف اکسانے کی کوشش کی لیکن وزیراعظم محمد نوازشریف اور وزیراعلیٰ شہبازشریف نے کاشتکاروں کے مسائل حل کرکے انکے دل جیت لیے ہیں اورآج کاشتکار ان کی تعریف کررہے ہیں اوریہ تقریب بھی انہی کے لئے منعقد کی گئی ہے ۔کسان اتحاد کے صدر خالد کھوکھر نے کہا کہ وزیراعلیٰ شہبازشریف کی ذاتی کاوشوں کے باعث وفاقی اور صوبائی بجٹ میں کسان کی خوشحالی کیلئے شاندار اقدامات کا اعلان کیا ہے جو اس بات کا ثبوت ہے کہ شہبازشریف کسانوں سے محبت کرتے ہیں ۔صوبائی وزراء فرخ جاوید،یاور زمان ،ایم این اے افتخار نذیر،چےئرمین پاکستان کسان اتحاد چوہدری محمد اکرم اورکاشتکاروں کی بہت بڑ ی تعداد نے تقریب میں شرکت کی۔

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

اپنا تبصرہ بھیجیں