سیدوشریف اسپتال بنیادی سہولیات سےمحروم

مالاکنڈ ڈویژن کا سب سے بڑا سیدوشریف اسپتال بنیادی سہولیات سے محروم ہے، بیڈ دستیاب نہ ہونے کی وجہ سے لوگ کرائے پر چارپائی حاصل کرنے پر مجبور ہیں، صفائی کا بھی کوئی انتظام نہیں، جگہ جگہ گندگی کے ڈھیر پڑے ہیں۔

ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹراسپتال سیدوشریف کے مسائل کم کرنے اورمریضوں کو سہولتوں کی فراہمی کے لئے ایک نئی عمارت تو بنادی گئی لیکن دوسال بعد بھی سیدو شریف ٹیچنگ اسپتال کوفعال نہیں کیاجاسکا۔

سیدو شریف اسپتال خیبر پختونخوا کا دوسرا بڑا اسپتال ہے، 1998 میں اس اسپتال کو ٹیچنگ کا درجہ دیا گیا جس کے بعد 2006 میں یہاں 1250 بستروں پرمشتمل ایک جدید اسپتال کی تعمیر شروع ہوئی۔

2014میں 65 کروڑروپے کی لاگت سے نئےاسپتال کی 4منزلہ عمارت مکمل ہو ئی تومالاکنڈ ڈویژن بھر کے عوام کو بہترعلاج معالجے کے لیے ایک امید پیدا ہوئی۔ لیکن دوسال سے شہری اسپتال کی نئی عمارت کے فعال ہونے کے منتظر ہیں۔

صوبائی وزیر صحت شہرام ترکئی کا کہنا ہے کہ منصوبے میں جوخامیاں تھیں انہیں دور کرنے کی کوشش کررہےہیں۔ نئی عمارت کوجلد فعال بنانے کےلئے متعلقہ اداروں کو ڈیڈلائن دی جائے گی۔

شہرام خان ترکئی کامزید کہنا ہے کہ اگلے ہفتے سی اینڈ ڈبلیو سے میٹنگ ہے اور اس میں ان کو ڈیڈ لائن دی جائے گی تاکہ سوات اور ملاکنڈ ڈویژن کے عوام مستفید ہوسکے۔

نئی عمارت میں گیسٹرو وارڈ، برن سینٹر، آئی سی یو اور لیب کی سہولتیں موجود ہو ںگی۔ انتظامیہ کے مطابق اب بھی 92 سوئپرز کی اسامیاں خالی ہے۔

اسپتال کی نئی عمارت فعال نہ ہو نے کے باعث سوات اور مالاکنڈ ڈویژن کے شہری علاج معالجے کیلئے دیگر شہروں میں جانے پر مجبور ہیں۔

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

کیٹاگری میں : صحت

اپنا تبصرہ بھیجیں