اپوزیشن کا سینٹ میں کرپشن کے خلاف بل پیش کرنے کافیصلہ خوش آئند ہے۔ جماعت اسلامی پنجاب

پانامالیکس کے معاملے پر حکومت نے سنجیدگی کامظاہرہ نہ کیاتوگلی محلوں میں احتساب ہوگا۔
حکمرانوں کی جواب دہی کے معاملے پر خلفائے راشدین کے نقش قدم پرچلنے کی ضرورت ہے۔
امیر جماعت اسلامی پنجاب میاں مقصود احمدکی لاہور میں عوامی وفود سے گفتگو

لاہور( پی ایف پی ) امیر جماعت اسلامی پنجاب میاں مقصود احمد نے کہاہے کہ متحدہ اپوزیشن کاسینٹ میں کرپشن کے خلاف ”پانامہ پیپرز انکوائری ایکٹ“پیش کرنے کافیصلہ خوش آئند ہے۔حکومت ایک سازش کے تحت تحقیقاتی کمیشن کے ٹی اوآرزپر مذاکرات کو طول دے رہی ہے جس کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے۔یہ پانامالیکس کی تحقیقات سے فرار کے مترادف ہے۔پانامہ لیکس کے بعد نواز شریف نے خود کو اور اپنے خاندان کو احتساب کے لئے پیش کرنے کاموقف اختیارکیا تھا گر اب لیت ولعل سے کام لیاجارہا ہے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روزمنصورہ میں مختلف عوامی وفود سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے کہاکہ ٹی او آرز کے ساتھ دیگر جرائم کے چھ لاکھ مقدمات کو صرف تین جج نہیں دیکھ سکتے۔ان جرائم کے مقدمات کے لئے پہلے سے موجود جوڈیشل نظام کو فعال کرنے کی ضرورت ہے۔ملک میں کرپشن کی انتہاءہوچکی ہے۔آئے روزنیااور بڑاکرپشن اسکینڈل منظر عام پر آرہا ہے۔جب تک ملک میں قانون سب کے لئے برابر نہیں ہوجاتا ہم ترقی یافتہ ممالک کی فہرست میں شامل ہوناتودور ہم اس کی دوڑ میں بھی شریک نہیں ہوسکتے۔کرپشن کے قلع قمع اور ٹی او آرز کے معاملے پر حکومت کارویہ نامناسب ہے جس پر ساری قوم کو تشویش ہے۔میاں مقصود احمد نے کہاکہ اگر حکومت نے پانامالیکس تحقیقات میں سنجیدگی کامظاہرہ نہ کیاتوپاکستان کے گلی محلوں اورسڑکوں پر احتساب کے لئے لوگ نکلیں گے۔18کروڑ عوام کامطالبہ ہے کہ حکمران بلاخوف وخطر احتساب کاعمل شروع کریں اور کوئی ادارہ یاشخص کسی کو بھی اس حوالے سے استشنا حاصل نہیں ہونا چاہئے۔احتساب اور جواب دہی کے معاملے پر خلفائے راشدین کے نقش قدم پر چلنے کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہاکہ کئی مہینے ہوچکے ہیں پانامالیکس کے حوالے سے معاملہ کھٹائی میں پڑاہواہے جوکہ دنیا میں رسوائی کا باعث بن رہا ہے۔دنیا میں جن حکمرانوں کے نام منی لانڈرنگ اور ٹیکس چوری میں آئے وہاں کمیشن اپناکام کررہے ہیں مگر بدقسمتی سے ہمارے ہاں معاملہ الٹ چل رہا ہے۔انہوں نے کہاکہ پاکستان میں روزانہ اربوں روپے کی کرپشن لمحہ فکریہ ہے۔بجٹ کا زیادہ ترحصہ کرپشن کی نذر ہوجاتاہے۔ضرورت اس امر کی ہے کہ اس کی روک تھام کے لئے ہنگامی بنیادوں پر اقدامات کیے جائیں۔

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

اپنا تبصرہ بھیجیں