'القاعدہ نے الظواہری کی رشتہ دارخواتین کی رہائی کیلئے اغواء کیا'‘علی حیدر گیلانی

کراچی(پی ایف پی) سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کے گذشتہ ماہ افغانستان سے بازیاب ہونے والے بیٹے علی حیدر گیلانی نے انکشاف کیا ہے کہ وہ 3 سال تک القاعدہ کے قبضے میں رہے جو ان کے ذریعے ایمن الظواہری کے خاندان کی چند خواتین کو رہا کروانی چاہتی تھی۔برطانوی نشریاتی ادارے کو دیئے گئے ایک خصوصی انٹرویو میں علی حیدر گیلانی نے اپنی 3 سالہ قید کے حوالے سے تفصیلی گفتگو کی۔ علی حیدر گیلانی کا کہنا تھا کہ وہ 3 سال تک القاعدہ کے قبضے میں رہے تھے اور کراچی سے تعلق رکھنے والا القاعدہ کا ایک اہم رکن ضیاء ان کے ساتھ 3 سال تک رہا۔
ان کا کہنا تھا، ‘القاعدہ میرے بدلے ڈاکٹر ایمن الظواہری کے خاندان کی چند قید خواتین کی رہائی اور بھاری رقم کا تقاضا کر رہی تھی۔‘علی گیلانی کا کہنا تھا کہ اغوا سے قبل اگرچہ انھیں کوئی دھمکی نہیں ملی تھی تاہم انھیں یہ بتایا گیا تھا کہ ان کا پیچھا کیا جا رہا ہے’ایک ہفتہ قبل ایک دوست نے بتایا تھا کہ ایک گاڑی آپ کا پیچھا کر رہی تھی اور بعد میں وہ کہیں کھڑے گاڑی کی نمبر پلیٹ تبدیل کر رہے تھے۔ میں اپنی سکیورٹی سے مطمئن تھا۔ انتخابی کمیشن کے ضابطہ اخلاق کے مطابق ہتھیاروں کی نمائش پر پابندی تھی اس لیے میرے محافظوں نے اپنے ہتھیار گاڑی میں چھوڑ دیے تھے۔اپنے اغوا کی تفصیلات بتاتے ہوئے انھوں نے کہا ’ایک جلسے کے بعد بہت سارے لوگوں اور اپنے دو محافظوں کے ساتھ میں باہر نکالا تو کسی نے میری گردن سے پکڑ کر مجھے زور سے دھکا دیا اور میں زمین پر گر گیا۔ پھر میں نے گولیوں کی آواز سنی اور اپنے دونوں محافظوں کو گرتے دیکھا۔ میں زمین پر لیٹا تھا کہ انھوں نے بندوق میرے سر پر دے ماری اور میرا سر پھٹ گیا۔
مجھے اس وقت لگا کہ شاید مارنے آئے ہیں۔‘علی حیدر گیلانی کے مطابق ان کے اغواکاروں کی تعداد چھ تھی۔’انھوں نے مجھے گاڑی میں ڈالا اور اس خوف سے کہ کوئی جاسوسی کے آلات میرے کپڑوں میں نہ ہوں میرے کپڑے اور جوتے اتار کر باہر پھینک دیے۔’ان کا مجھ سے پہلا سوال یہ تھا کہ آپ سنی ہو یا شیعہ۔ مجھے لگا کہ یہ کوئی فرقہ وارانہ واردات ہے۔ انھوں نے میری آنکھوں پر پٹی نہیں باندھی تھی لہٰذا میں انھیں دیکھ سکتا تھا لیکن اب ان کے چہرے بھول گیا ہوں۔ وہ سب پنجابی زبان میں باتیں کر رہے تھے۔ پھر مجھے خاموش رہنے کے لیے کہا اور ایسا نہ کرنے پر گولی مارنے کی دھمکی دی اور گاڑی ملتان سے خانیوال روڈ پر ڈال دی۔‘سابق وزیرِ اعظم کے صاحبزادے نے بتایا کہ اغوا کے بعد انھیں کچھ عرصے تک فیصل آباد میں رکھا گیا جہاں سے انھیں وزیرستان منتقل کیا گیا۔’ملتان سے فیصل آباد تک سفر میں کوئی پولیس چوکی نہیں آئی اور نہ کوئی کہیں چیکنگ ہوئی۔ مجھے کوئی اڑھائی ماہ تک فیصل آباد میں ایک مکان میں رکھا گیا۔
اخبار وہاں آتے تھے اس لیے اندازہ ہوا کہ یہ فیصل آباد ہے۔ انھوں نے مجھے زنجیر سے باندھ کر رکھا بلکہ بعض اوقات وہ رات کو سوتے ہوئے ہاتھوں میں بھی زنجیر پہنا دیتے تھے۔‘ وہاں انھوں نے مجھے بتایا کہ وہ مجھے وزیرستان لے کر جا رہے ہیں دو ماہ کے لیے جہاں سے وہ مجھے رہا کر دیں گے کیونکہ ان کی میرے خاندان سے ڈیل ہوگئی ہے۔ شاید وہ یقینی بنانا چاہتے تھے کہ سفر کے دوران میں کہیں مزاحمت نہ کروں۔’22 جولائی 2013 کو وہ مجھے ایک گاڑی میں براستہ موٹر وے بنوں سے وزیرستان لے گئے۔ انھوں نے مجھے اور دو اور لوگوں کو برقعے پہنا دیے اور چپ رہنے کے لیے کہا۔ بنوں سے وزیرستان جاتے ہوئے کوئی دس فوجی چوکیاں آئیں۔ایک دو پر شناخت کے لیے روکا گیا لیکن صرف ڈرائیور کا شناختی کارڈ دیکھ کر چھوڑ دیتے تھے۔ مسافروں کی چیکنگ نہیں کر رہے تھے۔ (شمالی وزیرستان میں) میں ڈانڈے درپہ خیل میں مجھے سات ماہ تک رکھا گیا۔ وہاں بھی سارے پنجابی بولنے والے اور ایک جرمن مغوی تھا جسے ملتان سے اٹھایا گیا تھا۔
مجھ پر انھوں نے کبھی جسمانی تشدد نہیں کیا لیکن ذہنی دباو¿ میں رکھتے تھے۔ زنجیر کی وجہ سے بیت الخلا جانے میں دقت وغیرہ کافی رہی۔‘’قید کے دوران میں نے 14 ماہ تک آسمان نہیں دیکھا۔ کمرے میں ایک بلب 24 گھنٹے جلتا رہتا تھا۔ قدرتی روشنی ناپید تھی۔ میں نے ایک دن تنگ آ کر اغوا کاروں سے کہا کہ کم از کم یہ بلب رات کے وقت تو بند کر دیا کرو تاکہ مجھے دن اور رات کا کوئی اندازہ تو ہو۔‘طالبان کو کرکٹ کا شوق تھا۔ ورلڈ کپ کے دوران جب پاکستان جنوبی افریقہ کے خلاف میچ کھیل رہا تھا تو میں نے اپنے اغوا کاروں سے درخواست کی کہ مجھے میچ دیکھنے دیں۔ انھوں نے ٹی وی تو نہیں لیکن ریڈیو کا بندوبست کر دیا۔
کمرے کے اندر سگنل صاف نہیں آ رہے تھے لہٰذا میں ریڈیو اور سلیپنگ بیگ لے کر باہر آگیا۔ پھر وہ میچ میں نے برفباری کے دوران سنا اور پاکستان جیت گیا تو خوشی کی انتہا بھی نہ تھی۔‘علی حیدر کے مطابق ان کے اغواکاروں کے مطالبات غیرحقیقی تھے جیسے کہ امریکی فوج کا افغانستان سے مکمل انخلا، قیدیوں کی رہائی اور رقم کا تقاضہ لیکن پیسہ ان کے لیے کبھی مسئلہ نہیں رہا۔ان کا کہنا تھا کہ انھیں ان کے اغوا کار اکثر بتاتے تھے کہ اگر ان کی رہائی کے لیے کوئی فوجی کارروائی ہوئی تو سب سے پہلے وہ خود انھیں گولی مار دیں گے۔یاد رہے کہ علی حیدر گیلانی کو 9 مئی 2013 کو عام انتخابات سے 2 روز قبل ملتان سے اغوائ کیا گیا تھا، جن کو گذشتہ ماہ 10 مئی کو افغان اور امریکی فورسز نے مشترکہ آپریشن کے ذریعے افغان صوبے پکتیکا سے بازیاب کروایا تھا۔

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

اپنا تبصرہ بھیجیں