آزاد کشمیر و پاکستان کی عوام مسلح افواج کے شانہ بشانہ بھارتی فوج کی کسی بھی جارحیت کا مقابلہ کرنے کے لیے تیار ہیں،سردار مسعود

بھارت کے غیر ذمہ دارانہ اور رویے کی وجہ سے پورا علاقہ بد امنی اور افراتفری کا شکار ہو گیا
پاکستان اور بھارت کے مابین تنازعہ کشمیر سمیت تمام تصفیہ طلب مسائل کا حل سفارتکاری اور پر امن ذرائع کے ذریعے بات چیت سے ہی ممکن ہے ،صدر آزادکشمیر
صدر آزادکشمیر کا لائن آف کنٹرول پر جاری مسلسل بھارتی فائرنگ سے پیدا شدہ صورتحال کا جائزہ لیا
متاثر ہ شہریوں کے لیے حکومت آزاد کشمیر کے مختلف اداروں اور نیم حکومتی تنظیموں کی طرف سے ریلیف اور بحالی کے اقدامات کا بھی جائز ہ لیا

مظفرآباد ( پی ایف پی )صدر آزاد جموں و کشمیر سردار مسعود خان نے اتوار کے روز ایوان صدر مظفرآباد میں لائن آف کنٹرول پر جاری مسلسل بھارتی فائرنگ سے پیدا ہونے والی صورتحال کا جائزہ لیا اور بھارتی گولہ بھاری سے متاثر ہونے والے شہریوں کے لیے حکومت آزاد کشمیر کے مختلف اداروں اور نیم حکومتی تنظیموں کی طرف سے ریلیف اور بحالی کے اقدامات کا جائزہ لیا۔ صدر آزاد کشمیر کو اس حوالے سے چیئرمین ریڈ کریسنٹ سو سائٹی آزاد کشمیر سردار محمود خان نے تفصیلی بریفنگ دی۔چیئرمین ریڈ کریسنٹ سوسائٹی اور سیکرٹری اسٹیٹ ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی شاہد محی الدین نے بتایا کہ ریڈ کریسنٹ سوسائٹی کے رضا اروں کی ٹیموں ، ابتدائی طبی امداد اور ریلیف کا سامان متاثرہ علاقوں کی طرف روانہ کر دیا گیا ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ ریڈ کریسنٹ کے رضا کار لائن آف کنٹرول پر بھارتی فائرنگ سے زخمی ہونے والے شہریوں کو خون کی فراہمی کا بھی ہنگامی بنیاد پر بندوبست کرنے میں مصروف ہیں۔ ریڈ کریسنٹ تمام متعلقہ اضلاع میں ضلعی انتظامیہ کے ساتھ مکمل رابطے میں ہے جبکہ پاکستان ریڈ کریسنٹ سوسائٹی کے صدر دفتر سے پانچ سو متاثرہ خاندانوں کے لیے ہنگامی ریلیف اور خشک راشن کوٹلی اور مظفرآباد کے اضلاع میں مہیا کیا جار ہا ہے۔ صدر آزاد کشمیر کو بتایا گیا کہ اسٹیٹ ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کوٹلی
،پونچھ اور بھمبر کے اضلاع میں بھارتی فائرنگ سے متاثرہ شہریوں کو نقد امدادی رقوم بھی مہیا کر رہی ہے۔ اسٹیٹ ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی مظفرآباد اور حویلی کے اضلاع میں بھارتی فائرنگ کے متاثرین کو خوراک اور رہائش کی سہولیات بھی مہیا کر رہی ہے۔ صدر آزاد کشمیر کو مذید بتایا گیا کہ محکمہ صحت عامہ فائرنگ سے زخمی ہونے والوں کو ا بتدائی طبی امداد ہنگامی بنیاد پر مہیا کر رہی ہے اور اس مقصد کے لیے دارلحکومت اور متاثرہ اضلاع میں کنٹرول روم قائم کر دیئے گئے ہیں۔ اس کے علاوہ ایک نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی ، پاک آرمی اور آزاد کشمیر کے محکمہ داخلہ اور دوسرے متعلقہ اداروں کے تعاون سے متاثرین کو ہنگامی بنیاد پر امداد اور ریلیف مہیا کرنے کے لیے ایک مفصل پلان بھی تیار کر لیا گیا ہے۔ صدر آزاد کشمیر کو بتایا گیا کہ نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کی ہدایت پر ریسکیو 1122 کو بھی ہائی الرٹ کر دیا گیا ہے۔ دوسری طرف چیف سیکرٹری آزاد کشمیر نے وفاقی حکومت کو تجویز دی ہے کہ بھارتی فائرنگ سے متاثرہونیو الے آزاد
کشمیر کے تمام شہریوں کو بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام سے ہنگامی بنیاد پر کیش گرانٹ مہیا کی جائے۔ صدر آزاد کشمیر کو یہ بھی بتایا گیا کہ تقریباً 80 ہزار گھرانے براہ راست بھارت کی فائرنگ کی زد میں ہیں جن تک امداد پہنچائی جانی چاہیے۔ صدر آزاد کشمیر سردار مسعود خان نے اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ آزاد کشمیر کے لوگ پاکستان کے عوام اور ملک کی مسلح افواج کے شانہ بشانہ بھارتی فوج کی کسی بھی جارحیت کا مقابلہ کرنے کے لیے تیار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بھارت کے غیر ذمہ دارانہ اور رویے کی وجہ سے پورا علاقہ بد امنی اور افرا
تفری کا شکار ہو گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان اور بھارت کے مابین تنازعہ کشمیر سمیت تمام تصفیہ طلب مسائل کا حل سفارتکاری اور پر امن ذرائع کے ذریعے بات چیت سے ہی ممکن ہے۔

Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

اپنا تبصرہ بھیجیں